میر علی میں ٹارگٹ کلنگ کے خلاف جاری دھرناختم

حکام اور مظاہرین کے درمیان کامیاب مذاکرات کے بعد شمالی وزیرستان میر علی میں ٹارگٹ کلنگ کے خلاف جاری دھرناختم کر دیا گیا۔پولیٹیکل انتظامیہ کے آفسران اور پاک فوج کے میجر جنرل اظہر اقبال عباسی نے دھرنا کے شرکاء سے مذاکرات کئے ۔مذاکرات میں اتفاق کیا گیا کہ ٹارگٹ کلنگ کی روک تھام، قیام امن عامہ اور آپریشن ضرب عضب سے متاثرہ مکانات کے معاوضہ کیلئے اقدامات اُٹھائے جائیں گے۔ پولیٹیکل انتظامیہ اور سکیورٹی فورسز کے اہلکار ہر گاوں میں مشترکہ گشت کریں گے ۔اس کیساتھ ساتھ شمالی وزیرستان کی داخلی و خارجی راستوں پر بھی مشترکہ اہلکار تعینات ہوں گے۔ اسی طرح رمضان المبارک کے دوران سحری، افطاری اور تراویح کے اوقات کے دوران خصوصی سکیورٹی کا انتظام کیا جائے گا۔ مکانات کے معاوضے کے حوالے سے دھرنا کے شرکاء کوبتایا گیا کہ نقصانات کا آزالہ کیا جائے گا جس کیلئے جی او سی نے بذات خود وزیراعظم ،وزارت سیفران اور فاٹا سیکرٹریٹ سے بات کی ہے ۔یہ بھی فیصلہ ہوا کہ عوام کی حفاظت کیلئے گاوں کی سطح پر خاصہ دار فورس کو اسلحہ فراہم کرنے کیلئے کور ہیڈکوارٹر کیساتھ کیس اُٹھایا جائے گا۔ مذاکرات میں اس بات پر بھی اتفاق ہوا کہ آئندہ شمالی وزیرستان میں ہر جرگہ میں یوتھ آف وزیرستان کو بھی نمائندگی دی جائے گی ۔جس پر دھرنا ختم کیا گیا واضح رہے کہ شمالی وزیرستان میں جاری ٹارگٹ کلنگ اور بم دھماکوں کے خلاف یوتھ آف شمالی وزیرستان نے اتوار کے روز سے میر علی میں دھرنا دے رکھا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں