سٹی 5 فیڈر کے باوجود ٹرپنگ کیوں؟ خان ریاض کی رپورٹ


تحریر: خان ریاض خان


رمضان کے مہینے میں غیر مسلم بھی پوری دنیا میں مسلمانوں کا خیال رکھتے ہیں اور نہ صرف سستے بازار کھول دیئے جاتے ہیں بلکہ اوقات کار میں بھی نرمی کی جاتی ہے . لیکن بنوں میں رمضان کے اس مہینے میں واپڈا کے مظالم نہ صرف جاری ہیں بلکہ مخصوص لوگوں کو سہولت بھی مہیا کی جارہی ہے.

میرے فیس بک پیج پرموجود رمضان شیڈول 8.5.2018 کے مطابق سٹی 2 فیڈر اور سٹی 3 فیڈر کے ٹائم ٹیبل کو دیکھیں تو پتہ چلتا ہے کہ سٹی اور ہنجل کا شیڈول واپڈا یونین اور کچھ امیرزادوں کیلئے تبدیل کیاگیا ھے تاکہ جب ایک لائن نہ ھو تو دوسری لائن چالو ھو جس کی وجہ سے ایک لائن کا لوڈ دوسرے فیڈر کو اوورلوڈ کرتا ہے اورپھر ٹرپنگ ھوتی ھے.

اگر دیکھا جائے تو سٹی 4 فیڈر اور کینٹ 1 فیڈروں کے شیڈول ایک جیسے ہیں مگر سٹی اور سوکڑی میں موجود واپڈا یونین کے مشران اور کچھ خانان لوگوں کو خوش کرنے کے لیے ٹائم ٹیبل تبدیل کیے ہیں جس میں بنوں گریڈ کے لوگ ملوث ھوتے ھیں جس کی وجہ سے ان فیڈروں پر ٹرپنگ ھوتی ھے.
اگر سٹی 1،2،3،4 اور کینٹ 1 فیڈروں پر شیڈول اور ٹائم ایک جیسا ھوجائے اور ایک وقت پر ان اف ھوجائے تو کوئی چوری یا ٹرپنگ نہیں ھوگی مگر افسوس واپڈا خود اس مسئلے کو دیکھ کر بھی چپ ھے.
دوسری طرف افسوس ھے کہ پشاور ھائیکورٹ بنوں بنچ میں ھماری طرف سے ڈیڑھ سال سے جاری واپڈا کی جانب سے ٹرپنگ اور
غیر قانونی لوڈشیڈنگ کیس میں 8 ماہ سے پیشی تک نہ ھوسکی.
جبکہ واپڈا افسران کو ڈبل سورس یعنی ڈبل لائن کو ہٹانے کیلئے باربار ثبوت دینے کے باوجود واپڈا یونین اور افسران چند ظالموں کو خوش کرنے کیلئے چپ ھیں. واپڈا رمضان المبارک میں بھی اپنے مظالم سے باز نہ آیا. جس کی وجہ سے بنوں سٹی اور ملحقہ علاقوں میں میں اتنی سخت گرمی میں فیڈر ٹرپنگ کا مسئلہ 2 سال بعد حل نہ ھوسکا.
ایک ماہ پہلے سٹی 5 فیڈر مکمل ھونے کے بعد افتتاح بھی ھوچکا مگر ھمارے سیاستدان اور یونین کے کچھ لوگوں اور واپڈا افسران کی لاپروائی کی وجہ سے اج تک سٹی 5 فیڈر پر لوڈ مینجمنٹ نہ ھوسکا اور نہ ہی بنوں سٹی، ہنجل اور سوکڑی میں ڈبل سورس یعنی ڈبل لائن کو ہٹایا گیا جس کی وجہ سے سٹی اور ملحقہ علاقوں کی عوام مصیبتیں بھگت رہے ہیں اور ٹرپنگ کے مسائل سے دوچار ہیں. جبکہ ھمارے سیاستدان اور واپڈا افسران آرام فرمارہے ھیں اور پھر یہی سیاستدان اپ سے ووٹ مانگنے آئیں گے

اپنا تبصرہ بھیجیں